Breaking News

Contents

Poem By Mehar Afroz

ایک احساس احباب کی زریں بصارتوں کی نذر “دل میرا بیراگی ہوا “ دل میرا بیراگی ہے . دوست ہوئے خودغرض. آنتوں کے ٹکڑوں کی، تمام ضرورتیں ہوئیں پوری . ہوگیےء وہ خود مختار اپنے پیروں پر کھڑے ہونے کا نشہّ خودمختار بنا دیتا ہے . سارے دلدار لگ گیےء دوجے پار ، کویء اور بہتر دلدار مل گیا ہوگا …

Read More »

Naat By Suleiman Khumar

فیس بُک کے تمام احباب کو جمعہ مبارک… میرے زیرِ ترتیب نعتیہ مجموعہ “پیکرِ نور” میں شامل ایک نعت عاشقانِ رسول کی معتبر بصارتوں کی نذر ؛ نعت وہ بشر ہے نہ فرشتہ نہ خدا ہے، یوں ہے صرف خالق کو حقیقت کا پتا ہے، یوں ہے دیکھنے میں وہ نظر آتا ہے ہم جیسا، مگر سچ تو یہ ہے …

Read More »

Poem By Jameel Ur Rehman

شکار کے موسم میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شکارکا موسم سبھی کے لیے نہیں آتا اسی لیے اِس موسم میں شکاری کتوں کے نرخ بڑھ جاتے ہیں جنگلوں میں خرگوشوں اور ہرنوں کی پنڈلیاں سوجنے لگتی ہیں اور شہروں میں فضا کی سانس پھول جاتی ہے ایسے ہی کسی موسم میں ایک شکاری کتے نے میری پنڈلی ادھیڑ دی تھی تب سے میں …

Read More »

Ghazal By Parvez Akhtar

آ گیا ہوں کسی کی آئی میں ہے برائی بہت بھلائی میں اپنا سب کچھ لٹا کے بیٹھ گئے آپسی زور آزمائی میں کچھ تو برباد ہیں گناہوں سے اور کچھ زعمِ پارسائی میں کیسی کم بخت آندھیاں آئیں میری دنیا بسی، بسائی میں بانٹنے آ، متاعِ رنج و الم تیرا حصہ بھی ہے کمائی میں خیر سے میں تو …

Read More »

Ghazal By Paras Mazari

ترا غرور عبث انتہائ سطح پہ ہے بلندی پر بھی وہی ہے جو کھائ سطح پہ ہے پھلانگ سکتا ہوں جتنا ہے دو دلوں کے بیچ مگر جو فاصلہ جغرافیائ سطح پہ ہے یہ کس ہنر سے کیا تم نے خود کو سیر اے دوست کہ دودھ پی بھی لیا اور ملائ سطح پہ ہے مجھے نہیں ہے ذرا رنج …

Read More »

Ghazal By Ahmed Soz

یک تازہ غزل روایتی مزاج کی آنسوؤں سے کبھی وضو بھی کروں اپنے گالوں کو سرخ رو بھی کروں چاک کرنے لگوں کبھی دامن اور کبھی بیٹھ کر رفو بھی کروں نشئہ ھو کرے مجھے مدہوش اپنی راتیں کبھی سبو بھی کروں زندگی تجھ سے پیار بھی ھے مجھے زندگی میں تجھے لہو بھی کروں ایک دن فاصلے مٹاؤں سبھی …

Read More »

Ghazal By Diya Gem

تمہارے پیار کا دریا ہی استعارہ تھا ہماری ناؤ تھی اور عشق کا کنارا تھا تمہارا نام لبوں پر نہ جانے کیوں آیا کسی خیال میں پھولوں کو جب پکارا تھا پھر اس کے بعد تو سارے اجالے ختم ہوئے کہ اس کی آنکھ میں روشن وہی ستارہ تھا میں جیت جاؤں اسے ، بس یہی تمنا تھی مجھے ہی …

Read More »

Gazal By Shafeeq Abidi

:. …………….ایک طرحی غزل…………… ……صاحبانِ فہم و ادراک کی نذر….. تو ہے شاہد تو شہادت میں اثر پیدا کر مردِ حق کوش کی مانند جگر پیدا کر ہر بلندی ترے قدموں کی خاک چاٹے گی اپنی رفتار میں کردار کے پر پیدا کر خوف ظالم کانہ رکھ ورنہ تو مٹ جائے گا اپنے اللہ کا ڈر دل .میں مگر پیدا …

Read More »