Breaking News

Ghazal by Arshad Abdul Hameed

غزل
۔۔۔۔۔
ارشد عبدالحمید

پکارتا ہے صدا کی طرح کوئی چراغ
ہے آس پاس ہوا کی طرح کوئی چراغ

سدا رہے گی کوئی ٹیس میرے سینے میں
جلا رہے گا سدا کی طرح کوئی چراغ

جو چاہتا ہے چہک اٹٌھیں شب کے سب طیور
تو گل کھلائے صبا کی طرح کوئی چراغ

یہ تیرگی مری منزل کو چھو نہ پائے گی
رہے گا سمت نما کی طرح کوئی چراغ

یہ کس ستارہ بدن کی جھمک ہوئی طلوع
کہ جل رہا ہے قبا کی طرح کوئی چراغ

About meharafroz

Check Also

Short Story By Hamid Siraj

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *