Breaking News

Ghazal By Javed Adil sohawi

غزل کے اشعار
***********************
بات جب خلق۔ خدا کھینچ رہی ہوتی ہے
مری آواز ہوا کھینچ رہی ہوتی ہے

دل جو لے اڑتا ہے پَیروں کو پرندوں کی طرح
اصل میں کوئی دُعا کھینچ رہی ہوتی ہے

تم شرارت سے جو رکھ دیتے ہو ہاتھ آنکھوں پر
بخدا ” جان “حنا کھینچ رہی ہوتی ہے

پیاس جب بڑھتی ہے دریاؤں میں افسانوں کی
موج سے موج،گھڑا کھینچ رہی ہوتی ہے

دور ہوتی ہے ابھی گونج کے زنداں سے پکار
پھر نئی چیخ گَلا کھینچ رہی ہوتی ہے

جانے کیوں چار لکیروں سے چرا کر جنت
زندگی حشر نیا کھینچ رہی ہوتی ہے

جب کوئی دشت۔ محبت سے شتربان اٹھے
ریت پر” کوئی” ردا کھینچ رہی ہوتی ہے

ماں کے ہاتھوں کے پراٹھے کا مزہ کیا کہئیے
بھوک بڑھ بڑھ کے تَوا کھینچ رہی ہوتی ہے
***************************
جاوید عادل سوہاوی

About meharafroz

Check Also

Short Story By Hamid Siraj

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *