Breaking News

Ghazal By Shamsa Najam

غزل
شاعرہ: شمسہ نجم
مسندِ عشق کی تفصیر نہ مانگو مجھ سے
خواب سے قبل ہی تعبیر نہ مانگو مجھ سے

لوحِ دل پر نئی تصویر بنا لی میں نے
اب پرانی کوئی تصویر نہ مانگو مجھ سے

پھر قلم توڑ دوں اپنا جسے لکھنے کے بعد
ایسی تم کوئی بھی تحریر نہ مانگو مجھ سے

حق پہ قربان ہو ایسا میں کہاں سے ڈھونڈوں
آج کے دور میں شبیر نہ مانگو مجھ سے

اب وہ جذبہ ہے نہ وہ عشقِ خداوندی ہے
میرے اشعار میں تاثیر نہ مانگو مجھ سے

اب تباہی کے مناظر کے سوا کچھ بھی نہیں
تم وہی وادیٔ کشمیر نہ مانگو مجھ سے

پھر کہیں بات نہ رہ جائے ادھوری شمسہ
اپنے اظہار میں تقصیر نہ مانگو مجھ سے
شمسہ نجم

About meharafroz

Check Also

Hikayat By Qaisar Nazir Khawar

پیسے پورے کرنا ترکی ادب؛ حکایات خواجہ نصیرالدین، مُلا سے انتخاب ۔ 1 اردو قالب؛ …

One comment

  1. Very classic and marvelous poetry of Shamsa Najam, I love it.
    Thanks Huda Foundation for sharing such a nice poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *