Breaking News

Ghazal by Tasneem Niyazi

غزل
لینی تھی نہیں سرجوبلا, لی کہ نہیں لی
رسوائیئِ اظہارِ وفا لی کہ نہیں لی

کہتے ہوکہ دے دی ہے نہ دےکربھی کوئی چیز
لے کرکبھی کہہ دے جوسوالی, کہ نہیں لی

بس ایک جھلک جس کی ہے بیمارکواکسیر
وہ فون سے پوچھے ہے, “دوالی کہ نہیں لی”

میں تیرے قبیلے سے نہیں ہوں کہ اے ظالم
جاں لیکے قسم جھوٹ ہی کھالی کہ نہیں لی

سامانِ سفرتم نے توچن چن کے لیاباندھ
کونے میں پڑی تھی جودعا, لی کہ نہیں لی

تسلیم نیازی

Leni thi nahin sar jo bala,li ke nahin li
Ruswai e izhar e wafa li ke nahin li

Kahte ho k de di ha,na dekar vi koi chiz
Lekar kabhi kahde jo sawali ke nahin li

Bs ek jhalak jiski ha bimar ko akseer
Wo fon se puche ha,”dawa li ke nahi li”

Mn tere qabile se nahin hun ke a zalim
Jan leke qasam jhut hi khali ke nahin li

Saman e safr tm n to chun chun k lia bandh
Kone me padi thi jo dua, li ke nahin li

About meharafroz

Check Also

Short Story By Hamid Siraj

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *