Breaking News

Introduction Of Poet Dilawar Ali

آج کا انتخاب: 10
دلاور علی آزر
بینر: جہانگیر نایاب
————————————
تعارف
دلاورعلی آزر 21.11.84 کو پاکستان کے صوبہ پنجاب کے ضلع اٹک کی تحصیل حسن ابدال میں پیدا ہُوئے آپ کے والد کا نام بشیراحمد ہے جو خانیوال کے رہنے والے تھے آپ نے اپنی ابتدائی تعلیم اِسی شہر ہی سے حاصل کی اور آج کل گلشنِ اقبال کراچی میں قیام پذیر ہیں آپ کو شاعری کی تمام جملہ اصناف سے رغبت ہے مگر غزل آپ کی محبوب ترین صنفِ اظہار ہے آپ نے شاعری کا باقاعدہ آغاز بھی اِسی صنفِ بیان سے کیا 2013 میں آپ کے پہلا مجموعہء غزل ”پانی” منصہء شہود پر آیا اور حال ہی میں دوسرا مجموعہ ”مآخذ” منظرِ عام پر آیا ہے علاوہ ازیں دِلاوَرعلی آزَر نعت ، منقبت اُور مضامین بھی لکھتے ہیں۔
دلاورعلی آزر نوجوان نسل کے سنجیدہ ترین شاعر ہیں اُور اگر میں یہ کہوں کہ دلاورعلی آزر نے جو مقام اتنے کم عرصے میں حاصل کیا وہ کسی اُور کے حصے میں نہیں آیا تو ہرگز غلط نہ ہوگا کیوں کہ جہاں جہاں اُردو شاعری کا سنجیدہ قاری موجود ہے وہاں وہاں دلاورعلی آزر کو پڑھا اور قدر کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے یہی نہیں بلکہ اُن کی شاعری کی انفرادیت کے اعتراف میں تقریباً سب ناقدینِ ادب نے مضامین لکھے ہیں اُور دو ایم اے اور ایک ایم فل کا مقالہ بھی لکھا جا چکا ہے ان کے کئی اشعار اور اکثر مصرعے زبان زدِ عام ہوچُکے ہیں آئیے ان کی غیر مطبوعہ شاعری پڑھتے ہیں اور دیکھتے ہیں کہ یہ شاعری ہمیں کن کن دنیاؤں کی سیر کرواتی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عکس منظر میں پلٹنے کے لیے ہوتا ہے
آئینہ گرد سے اٹنے کے لیے ہوتا ہے
شام ہوتی ہے تو ہوتا ہے مرا دل بے تاب
اور یہ تجھ سے لپٹنے کے لیے ہوتا ہے
یہ جو ہم دیکھ رہے ہیں کئی دنیاؤں کو
ایسا پھیلاؤ سمٹنے کے لیے ہوتا ہے
علم جتنا بھی ہو کم پڑتا ہے انسانوں کو
رزق جتنا بھی ہو بٹنے کے لیے ہوتا ہے
سائے کو شاملِ قامت نہ کرو آخرِ کار
بڑھ بھی جائے تو یہ گھٹنے کے لیے ہوتا ہے
گویا دنیا کی ضرورت نہیں درویشوں کو
یعنی کشکول الٹنے کے لیے ہوتا ہے
مطلعِ صبحِ نمو صاف تو ہوگا آزر
ابر چھایا ہوا چھٹنے کے لیے ہوتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر لحظہ چھلکتی رہے اندر سے بھری آنکھ
پابند نہیں رہتی سمندر سے بھری آنکھ
تصویر سے آگے کی طلب تھی مرے دل میں
سو میں نے کسی اُور ہی منظر سے بھری آنکھ
ڈرتا ہُوں جنوں مجھ سے مرا خواب نہ لے جائے
خالی ہی نہ کر دوں کہیں بھیتر سے بھری آنکھ
اک جذب تھا الفاظ میں رکھا ہُوا جس نے
اندَر سے مرا دل بھرا باہر سے بھری آنکھ
شاید اُسے امکان کا اندازہ نہیں تھا
جس شخص نے موجود و میّسر سے بھری آنکھ
جب کچھ بھی نہیں مل سکا رستے میں تو اک دن
ہم بادیہ پیماؤں نے صرصر سے بھری آنکھ
ورنہ مجھے کب ان پہ یقیں آنا تھا آزر
رنگوں نے مرے سامنے منظر سے بھری آنکھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سات دریاؤں کا پانی ہے مرے کوزے میں
بند اِک تازہ کہانی ہے مرے کوزے میں
تم اِسے پانی سمجھتے ہو تو سمجھو صاحب
یہ سمندر کی نشانی ہے مرے کوزے میں
میرے آباء نے جوانی میں مجھے سونپا تھا
میرے آباء کی جوانی ہے مرے کوزے میں
دیکھنے والو نئے نقش ملیں گے تم کو
سوچنے والو گرانی ہے مرے کوزے میں
جانے کس خاک سے یہ ظرف ہوا ہے تعمیر
جانے کس گھاٹ کا پانی ہے مرے کوزے میں
آن کی آن گذرتا ہے زمانہ اس پر
وقت کی نقل مکانی ہے مرے کوزے میں
چاروں سمتوں میں کوئی شے بھی اگر ہے موجود
اس نے وہ لا کے گرانی ہے مرے کوزے میں
قرض ہے مجھ پہ جو اِک عکسِ تمنا آزَر
اس نے کیا شکل بنانی ہے مرے کوزے میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ بہتے دریا کی بے کرانی سے ڈر رہا تھا
شدید پیاسا تھا اُور پانی سے ڈر رہا تھا
نظَر ، نظَر کی یقیں پسَندی پہ خوش تھی’ لیکن
بدَن ، بدَن کی گُماں رسانی سے ڈر رہا تھا
سبھی کو نیند آچُکی تھی یوں تو پَری سے مِل کر
مگر وہ اِک طِفل جو کہانی سے ڈر رہا تھا
لرزتے ہونٹوں سے گِر پڑے تھے حروف اِک دِن
دِل اپنے جذبوں کی ترجمانی سے ڈر رہا تھا
لغاتِ جاں سے کَشید کرتے ہُوئے سُخَن کو
مَیں ایک حرفِ غلَط معانی سے ڈر رہا تھا
جما ہُوا خون ہے رگوں میں نہ جانے کب سے
رُکا ہُوا خواب ہے’ روانی سے ڈر رہا تھا
وہ بے نشاں ہے جسے نشاں کی ہَوس تھی’ آزَر !
وہ رایگاں ہے جو رایگانی سے ڈر رہا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اِک فقیر کا حجرہ ہے آ کے چلتے بنو
پڑی ہے طاق پہ دُنیا اُٹھا کے چلتے بنو
جہانِ فانی ہے مت سوچنا سکونت کا
بس اپنے نام کا سکہ بِٹھا کے چلتے بنو
اب اِس کے بعد شکاری کمان کھینچے گا
تُم اُس سے پہلے ذرا پھڑپھڑا کے چلتے بنو
ہے بھیڑ ساقیء کوثر کو دیکھنے کے لیے
سب اپنی پیاس بجھاؤ بجھا کے چلتے بنو
نہیں ہے فائدہ اب کوئی سینہ کوبی کا
بہانے آئے تھے جو خوں بہا کے چلتے بنو
ہُوا ہُوں تلخ تو باعث بھی لازمی ہے کوئی
مَیں تُم سے اِس لیے رُوٹھا ہُوں تاکہ چلتے بنو
سجی رہے گی یونہی بزم حشر تک آزَر
تُم اپنے شعر سُناؤ سُنا کے چلتے بنو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

About meharafroz

Check Also

Short Story By Hamid Siraj

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *