Breaking News

Naats by Satyapal Anand

مجھ پہ نظرِ کرم ہو شاہِ امم

شاہِ عالم، یہ شاعری کا سفر
اور اس کی تمام تر روداد
آپ کے سامنے ہے، میں نے تو
نورِ احمدؐ سے مانگ کر کرنیں
اپنی راہوں میں روشنی کی ہے۔

مجھ پر نظرِ کرم ہو، شاہِ امم
اس لیے بھی کہ غیر مسلم ہوں
(دل سے لیکن ہوں آپؐ کا بندہ)
اس لیے بھی کہ میرا خامۂ فکر
آپؐ کے ذکر سے رسولِ پاک
نعت گوئی کا فن بھی سیکھ گیا
اس لیے بھی کہ ہر دعا میں اثر
ہے فقط آپؐ کی شفاعت سے

اے شہِ مرسلین، آپؐ مجھے
اسطاعت عطا کریں کہ میں
کامرانی سے شاعری کا سفر
طے کروں اور اپنی منزل تک
عزت و احترام سے پہنچوں!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(’’دستِ برگ‘‘ مطبوعہ ۰۹۹۱ء کی پہلی نظم)

ُ پیغام رساں
وہؐ اکیلے تھے
حبیبؐ کبریا، انوار ؐ کل، شاہؐ امم، حضرت محمدؐ
رات تھی اور ان کا بستر
ایک بے حد کھردرا سا بوریا تھا
فرش نا ہموار تھا غار ِ حرا کا
غار تیرہ تھا مگر روئے مبارک روشنی کا قمقمہ تھا
بند تھیں آنکھیں، مگر گہرائی میں اترے ہوئے وہ سن رہے تھے
جانی پہچانی سی اک آواز
جو لمحہ بہ لمحہ
پاس آتی جا رہی تھی!

روشنی کے نرم گالے
برف سے اُجلے، گرے روئے مبارک
مطلعَ نورِ ہدیٰ پر
اور شہنشاہِؐ امم تو خود سراپا روشنی تھے
نا ملائم کالی کملی، بوریے کی نور بافی
اور ان کی بیخ و بُن میں
نورِ عالم تاب کی کرنیں یکا یک یوں سمائیں
غار کے منہ سے ہویدا
روشنی ہی روشنی چاروں طرف پھیلی جہاں میں

اور جب آوازپاس آئی، تو پوچھا
’’آ، فرشتے
بول کیا پیغام لایا ہے مرے مالک سے امشب؟‘‘
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ُُٰ

About meharafroz

Check Also

Short Story by Shamoil Ahmed

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *