Breaking News

Nazam by Shamsa Najam

اس میں کچھ داغ ہیں
اور بہت عیب ہیں
تم ذرا دور سے چاند دیکھا کرو
کرکے عیبوں سے صرفِ نظر
دل کے تم نور سے چاند دیکھا کرو
عشق میں چاند کیا خوبصورت لگے
مثل محبوب بس ایک مورت لگے
ایسے دستور سے چاند دیکھا کرو
جب تخیل کے ترشے ہوئے
اک اپالو گیارہ میں تم بیٹھ کر
چاند کی سر زمیں پر قدم رکھ چکے
چاند چھونے کی دل میں تمنا تھی سو
تب ہی نزدیک تم کو بھی جانا پڑا
دل پہ تم ہاتھ رکھ کے تو سوچو ذرا
اب دیو مالائی قصوں میں کیا ہے کشش
چند پتھر ملے تھوڑی مٹی ملی
چاندنی کی کشش تو ہوا ہو گئی
دوستی چاند سے خاک میں جا ملی
عاشقی کا مگر کوئی موسم نہیں
چاند تسخیر ہو کوئی قدغن نہیں
چاند بھی ہے وہی چاندنی بھی وہی
بے قراری وہی عاشقی بھی وہی
ایک عاشق کے دل کی وہی بے کلی
چاندنی دیکھ کر جانے کیوں اب تلک
روح اور دل کے مابین اندر تلک
کچھ سکوں بس اترتا، اترتا لگے
چاند محبوب کا اب بھی چہرہ لگے
ایک اسیر محبت کو تو
چاندنی اب بھی بےتاب کرتی ہے سو
روح کو اس کی سیراب کرتی ہے وہ

About meharafroz

Check Also

Short Story By Hamid Siraj

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *