Breaking News

Ghazal by Mushtaque Asanghani

غزل
اسانغنی مشتاق رفیقیؔ
قد اُونچا ہو گیا ہے عیار آدمی کا
رسوا ہوا ہے یوں بھی کِردار آدمی کا
خود بینی، خود نمائی، ہے آج ہر کسی میں
ہے آدمی سے بڑھ کر دستار آدمی کا
ڈھونڈے سے بھی کسی میں انسانیت نہ پائی
محدود ہو گیا ہے دیدار آدمی کا
جو نیک آدمی ہے جنت اُسے ملے گی
دوزخ ہے بس ٹھکانہ بد کار آدمی کا
آلاتِ حرب کیسے، اُلفت سے کام لے لو
دراصل ہے یہی تو ہتھیار آدمی کا
مولا فلک سے اُس پر رحمت اتارتا ہے
بنتا ہے جو مسیحا بیمار آدمی کا
دنیا دراصل ایسا بازار ہے رفیقی
ہوتا ہے جس میں ہر دم بیوپار آدمی کا
Ghazal
Asangani Mushtaq Rafeeqi
Qad ouncha ho gaya hai i-yaar aadmi ka
Ruswa howa hai you(n) bhi kirdaar aadmi ka
Khud beeni, khud numa-e, hai aaj har kisi may
Hai aadmi say barrh kar dastaar aadmi ka
Dhoundhay say bhi kisi may insaniyat na paa-e
Mehdoud ho gaya hai deedar aadmi ka
Jo nayk aadmi hai jannat ussay milay gi
Douzaq hai bus thikaana badkaar aadmi ka
Aalaat-e-harb kaisay, ulfat say kaam lay lo
Darasl hai yahi to hathyaar aadmi ka
Moula falak say uss par rahmat utaarta hai
Banta hai jo masiha beemar aadmi ka
Dunya darasl aisa baazar hai Rafeeqi
Houta hai jis may har dum bayupaar aadmi ka
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

About aseem khazi khazi

Check Also

Naat by Riyaz Ahmed khumar