Breaking News

Flash Fiction By Qaisar Nazir khawar

فلیش فکشن
اپنا اپنا چلن
قیصر نذیر خاورؔ

بیٹی نے باپ سے کہا ؛
” پاپا آپ میرے گھر کیوں نہیں آتے ، میں دس سال مڈل ایسٹ میں رہی ، آپ نے میری بھیجی دس ٹکٹیں ضائع کر دیں، اب میں لندن میں ہوں اور آپ دو ٹکٹ ضائع کر چکے ہیں ۔۔۔ آپ آتے کیوں نہیں ؟ ماما تو ہر بار آئیں ۔ ۔ ۔ ۔جب جب میں نے انہیں بلایا ۔ ۔ ۔ ”
باپ نے جواب دیا ؛
” بیٹی ! میں تمہاری ماں کی تربیت اور تمہارے گھر کے تقدس کا پالن کر رہا ہوں ، جہاں تم درود ، آیت کریمہ ، آیت الکرسی کا ورد اور اسی طرح کی محفلیں سجاتی ہو اور میں محسوس کر سکتا ہوں کہ تمہارے گھر میں لوبان اور کافور کی باس رچی بسی ہو گی ۔ تمہاری ماں کو یہ سب اچھا لگتا ہو گا مگر میں ڈرتا ہوں کہ میں وہاں اپنے منہ سے نکلتی شراب کی باس بھی محسوس نہ کر پائوں گا ۔ ۔ ۔ میں اس لئے نہیں آ پاتا ۔ ”
بیٹی بولی ؛
” تو کیا میں آپ کو اپنے گھر میں کبھی نہ دیکھ پائوں گی ؟ ”
باپ نے کہا ؛
” نہیں ، اگر میں زندہ رہا ، تو اس وقت آئوں گا ؛ جب تمہاری بیٹی مجھے فون پر کہے گی ؛ کم آن ، گرنیڈ پا ، وی شیل حیو فن ، وائن ، ڈرنکس اینڈ مچ مور ۔ ۔ ۔ ”

دس سال بعد

” مام ، یہ کون ہیں ؟ ” ، نواسی بولی ۔
سنی ( بیٹی کا کوئی بیٹا نہیں ) ، یہ تمہارے نانا ۔ ۔ ۔ گرینڈ فادر ہیں ، انہیں ہیلو کہو ۔”
” ہائے گرینڈ پا ! ہایو آر یو ، میں اپنے بوائے فرینڈز سے ملنے جا رہی ہوں ۔ ۔ ۔ ٹو ہیو فن ، آپ چاہتے ہو۔ ۔ ۔ جوائن کرنا ۔ ۔ ۔ ۔ اِٹ شیل بی فن ۔ ۔ ۔ ۔ ڈرنکس اور یو مے فائنڈ اے میچ ۔ ۔ ۔ سَم لونلی اولڈ وومن ، مجھے ما۔ لو۔ م ہے ، گرینڈ ما مر چکی ہے ۔ ”

اس کی بیٹی اُس اور خود سے آنکھیں ملانے سے گریزاں ہے ۔ ۔ ۔ اس نے اپنے بال بھی شولڈر کٹ کروا کے بلونڈ کر رکھے ہیں ۔

About iliyas

Online Drugstore, buy baclofen online, Free shipping, buy Lexapro online, Discount 10% in Cheap Pharmacy Online Without a Prescription

Check Also

وار فکشن شام اک داستان ِعشق -افسانہ- Qaisar Nazeer Khawar

تین خواتین کا مشترکہ طور پر لکھا افسانہ برائے تنقید و تبصرہ ( یہ مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *