Breaking News

Ghazal By Javed Adil Sohavi

غزل احباب کی نذر
03 اکتوبر۔2018
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کمال۔فیض سےمحروم ہے خوشی کی لکیر
بڑھائو ہاتھ مکمل کرو ادھوری لکیر
۔۔۔۔۔۔
وہ میرا اپنا ہی بھائی تھا جس نے مٹی پر
مرے ہی خون سے کھینچی تھی سب سے پہلی لکیر
۔۔۔۔۔
تمہارا نام مٹا کر مُڑی تو ایسا لگا
تھی دست۔ موج میں جیسے کوئی سنہری لکیر
۔۔۔۔۔۔۔
سلوک تو ہے تعلق میں بے نیاز۔ لحاظ
جہاں پہ ضرب لگے گی وہاں پڑے گی لکیر
۔۔۔۔۔۔۔۔
کھِلی ہے دُور لب۔ یار پر ہنسی جیسے
گلے مِلی ہو چنبیلی سے اک گلابی لکیر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ایک خواہش۔دل جیسے خاک۔ صحرا پر
ہوا ئے تُند نے کھینچی ہو آڑھی تِرچھی لکیر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ سطر سطر جو لکھتا ہوں تیرے حسن پہ شعر
سو پنکھڑی سے بناتا ہوں اک حنائی لکیر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خدارا زلف کو آنچل میں قید مت کیجے
گلاب چہرے پہ مہکی ہوئی ہے کالی لکیر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نکل بھی سکتے ہیں عادل حصار۔۔جَہل سے ہم
چلے مٹا کے جو ہر شخص اپنی اپنی لکیر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاوید عادل سوہاوی

About Mehar Afroz

Check Also

Naat By Dr Maqsood Hassani

مسکان کے بطن سے وہ صاحب جلال دفعتا جمال میں آیا پھر تھوڑا سا مسکرایا …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *