Breaking News

Ghazal by Javed Adil Sohavi

سخنوری میں تو تم نے بھی میر مارنا تھا
بتاو!!! مار لیا ہے جو تیر مارنا تھا؟
۔۔۔۔۔۔۔۔
اٹھاو کاسہ چلو مانگو اب تو مار دیا۔۔
تمہارے کتوں نے جو جو فقیر مارنا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستم میں وہ جو تعلق کی بھیک دی گئی تھی
غضب تھا ہم نے اسی میں ضمیر مارنا تھا
۔۔۔۔۔۔
تو پھر یہ راہ میں کیوں سب غریب مارے گئے
تمہیں تو۔ اذن ہوا تھا ۔امیر مارنا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بدل کے دی تھی ۔ یہ فہرست مخبروں نے جناب!!!
بشیر چھوڑ کے تم نے نذیر مارنا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بٹھا دئیے گئے کرسی پہ نوٹ پہنا کر
جنہوں نے ڈال کے ڈاکہ، وزیر مارنا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔فناہ کر دیا خود عورتوں نے جوتوں سے
جوآس پاس کے لوگوں نے پیر مارنا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔
حضور چپکے سے یو ں دھاک تھوڑی بیٹھتی ہے!!!
شریف اٹھانا تھا اور راہگیر مارنا تھا ااا
۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دے رہے ہیں سپاری ضمیر والوں کی
جنہوں نے شہر کا ہر بے ضمیر مارنا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاوید عادل

About aseem khazi khazi

Check Also

Naat by Riyaz Ahmed khumar