Breaking News

Ghazal by Mushtaque Asanghani

غزل
اسانغنی مشتاق رفیقیؔ
ہر اک شئے اجنبی ہے میں کہاں ہوں
یہ کیسی زندگی ہے میں کہاں ہوں
خدا جانے ، ہے زندہ کون مجھ میں
یہ کوئی اور ہی ہے میں کہاں ہوں
مجھے کس نے یہاں لا کر کھڑایا
نیا ہر آدمی ہے میں کہاں ہوں
مرا دل بھی مرے بس میں نہیں ہے
یہ کیسی بےبسی ہے میں کہاں ہوں
ازل سے مجھ کو جس کی جستجو تھی
مقابل وہ کھڑی ہے میں کہاں ہوں
عجب وابستگی تیری ہے مجھ سے
تجھی سے ہر خوشی ہے میں کہاں ہوں
وہ سورج ہے تو پھر کیوں اُس کے ہوتے
یہ کیسی تیرگی ہے میں کہاں ہوں
یہ زنداں میں نہ جانے کس کی خاطر
نئی کھڑکی لگی ہے میں کہاں ہوں
رفیقی زندگی کل ڈھونڈتی تھی
اجل اب ڈھونڈتی ہے میں کہاں ہوں
Ghazal
Asangani Mushtaq Rafeeqi
Har ek shay ajnabi hai mai kaha(n) houn
A kaisi zindagai hai mai kaha(n) houn
Khuda janay, hai zinda koun mujh may
A koyi qur hi hai mai kaha(n) houn
Mujhay kis nay yaha(n) laa kar kharraya
Naya har aadmi hai mai kaha(n) houn
Mera dil bhi meray bus may nahi hai
A kaisi baybasi hai mai kaha(n) houn
Azal say mujh ko jis ki justaju thi
Muqabil o kharri hai mai kaha(n) houn
Ajab wabastagi tayri hai mujh say
Tujhi say har khushi hai mai kaha(n) houn
O suraj hai tu phir kyou(n) uss kay hotay
A kaisi teergi hai mai kaha(n) houn
A zinda(n) may na jaanay kis ki khatir
Nayi khirrki lagi hai mai kaha(n) houn
Rafeeqi zindagi kal dhoudhti thi
Ajal ab dhoundhti hai mai kaha(n) houn

About aseem khazi khazi

Check Also

Naat by Riyaz Ahmed khumar