Breaking News

Poem By Jameel Ur Rehman

شکار کے موسم میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شکارکا موسم سبھی کے لیے نہیں آتا
اسی لیے اِس موسم میں
شکاری کتوں کے نرخ بڑھ جاتے ہیں
جنگلوں میں خرگوشوں اور ہرنوں کی پنڈلیاں سوجنے لگتی ہیں
اور شہروں میں فضا کی سانس پھول جاتی ہے
ایسے ہی کسی موسم میں
ایک شکاری کتے نے میری پنڈلی ادھیڑ دی تھی
تب سے میں اور یہ موسم
ایک دوسرے کو دیکھتے ہی
دور سے پہچان لیتے ہیں


buy Vigora online, clomid online.

یہ موسم آدمی کو کتا بنانے پر قادر ہے
اس سے پہلے کہ یہ مجھے کتے میں بدل سکتا
میں نے خود شکار کرنے کی ٹھان لی
اورایک شکاری کتا خریدنے کے لیے
جانورستان جا پہنچا
شکاری کتوں کی ایک لمبی قطار میں سے
میں نے جسے منتخب کیا
دکاندار نے اُس کی تعریف میں
زمین و آسمان کے قلابے ملا دیے
لیکن دکان سے باہر نکلتے ہی
اُس نے کسی سحر سے آزاد ہو کر
میرا گریبان پکڑ لیا

میری عقل پرجانے کیسا پردہ پڑ گیا تھا
کہ میرے وفور ِ شوق نے
دکاندار سے فریب کھایا
اور اُس نے ایک سحرزدہ کو شکاری کتا بتا کر
اپنے دام کھرے کر لیے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چند قدموں کے فاصلے سے پلٹ کر
میں پھر اُسی دکان میں آیا ہوں
مگر اب
اُس دکان کے کاؤنٹر پر کوئی نہیں ہے
سوائے ایک کتے کے!

جمیل الرحمن

About Mehar Afroz

Check Also

Naat By Dr Maqsood Hassani

مسکان کے بطن سے وہ صاحب جلال دفعتا جمال میں آیا پھر تھوڑا سا مسکرایا …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *