Breaking News

Short Story by Haneef Qamar

“Me too”

افوہ…اوہ، جنگل کا(شیر)راجہ اپنی پٹاخہ رانیوں(شیرنیوں) کےساتھ ..؟
مست آئٹم لاتے ہو..!
“مہاراج ….، کبھی مجھے بھی اپنا ایک پٹاخہ حوالے کردومیں بھی رنگ رلیاں مناؤں گا، تمہارا کیا ہے تمہیں کوئی اور پٹاخہ مل ہی جائیگی…
جب میری برادری میں پتا چلیے گا کہ میں نے بھی رانی پٹا لی ہے، تو میری بھی شان بڑھ جائیگی.. میں بھی اپنی برادری کا راجہ بن جاؤں گا…جنگلی کتّے نے راجہ کو چھیڑتے ہوئے کہا.
غصہ میں بپھرائی ہوئی رانیوں کا پارہ یہ سن کر ساتویں آسمان پر پہنچ گیا،مگر راجہ چپ رہا “ایک جنگلی کتّا اور اس کی یہ ہمّت اور اس کی دلیری تو دیکھو راجہ کی موجودگی میں یہ ہمیں چھیڑ رہا ہے، اس کی یہ مجال…”
رانیاں بس راجہ کا اشارہ پانے کی منتظر تھیں کہ راجہ اب چھپٹیں گے کہ اب….، مگر راجہ نے.کتّے کے منہ لگنے سے، خاموشی کو بہتر جان کر رانیوں کو بھی چپ رہنے کا اشارہ کیا.
“کیوں راجہ جی مجھ سے ڈر گئے کیا..؟
یہ سامنے والی چنچل رانی ہی میرے حوالے کردو، سورج ڈوبنے سے پہلے غار تک پہنچا دوں گا…” مگر اب کی بار اس چنچل،نوجوان رانی کا خون ایسا کھول اٹھاکہ وہ راجہ کے حکم کی پرواہ کئے بغیر، جنگلی کتّے پر جھپٹ پڑی،جنگلی کتّا کمالِ ہوشیاری سے چکما دیکر بچ گیا، اسی طرح کتّا سارا جنگل رانی کو دوڑاتا رہا،چکما دیتا رہا بچتا رہا،کتّا آگے آگے اور غصہ ور رانی پیچھے پیچھے، آخر کار کتّازمین پر گرے ہوئے ایک کھوکھلے تنے میں گھس کر اس پار نکل گیا.
آناً فاناًنوجوان چنچل رانی بھی کتّےکےپیچھےاُس تنے میں گھسنا چاہا لیکن…، کتّاچونکہ دبلا پتلا تھاتنےکےاُس پار نکل گیا اور نوجوان چنچل رانی آدھی ادھوری پھنس گئی. جنگلی کتّے کا حربہ کار گر ثابت ہوا، اور جنگلی کتّا واپس پلٹ کر پیچھے آیا اور اپنی کتّا خصلت دکھانی شروع کردی….
اُس آدھی ادھوری نوجوان چنچل رانی کےسارےسپنےچور چورکردئے، جس نےجوانی کی دہلیز پر قدم رکھتے ہی راجہ کے ساتھ گھر بسانے کے لئے دیکھ رکھے تھے…. سورج بھی اپنا منہ دھیرے دھیرے چھپانے لگا تھا..
اس جنگلی کتّے نے اسےاپنی برادری میں منہ دکھانے کے لائق بھی نہیں چھوڑاتھا.
آخر کار وہ تھکے ماندے قدموں سے اس جگہ پہنچ گئی جہاں سے کتّے کے سنگ بھاگی تھی،
وہاں سب اس کے منتظر تھے، وہ راجہ کے قریب پہنچ کر انتقام لینے کیلئے راجہ کو اس کتّے کی ساری نا شائستہ حرکتیں رو رو کر سناتی رہی راجہ کو اکساتی رہی جوش دلاتی رہی، راجہ اور دیگر ساتھی رانیوں نے بغور سنا اور اپنی اپنی گردنیں نیچی کر کے آنکھیں بند کرلیں
” جیسے کہہ رہے ہوں…..
“Me Too”

About aseem khazi khazi

Check Also

Naat by Riyaz Ahmed khumar

18 comments

  1. Hiya, I am really glad I have found this info. Today bloggers publish only about gossips and net and this is really annoying. A good blog with exciting content, that’s what I need. Thank you for keeping this website, I’ll be visiting it. Do you do newsletters? Can’t find it.

  2. Much thanks! It is definitely an impressive web-site!

    http://fr.musclemass.space/

  3. superb post.Never knew this, regards for letting me know.

  4. Really interesting, looking frontward to coming back.

    http://nl.t-booster.org/

  5. vergrößerte prostata ernährung

    Superb Web-site, Continue the very good work. Thanks!

  6. http://nl.cgtribc.org/detox-thee-kruidvat-ervaringen/

    You have got the most effective web-sites.

  7. http://it.testosteron.space/comprare-testosterone-online/

    Great internet site! It looks extremely professional! Keep up the helpful work!

  8. come aumentare la massa muscolare delle gambe

    I enjoy reading through your site. Thanks for your time!

  9. Just desired to tell you I’m just glad I happened upon your site! http://laboratoriogiganti.it/nutrigo-lab-burner-brucia-grassi-efficace/

  10. What’s up, awesome online site you’ve gotten presently. http://baraita.net/cinsulin/

  11. Fantastic Webpage, Preserve the beneficial work. Thanks! http://baraita.net/nutrigo-lab-burner/

  12. Great looking site. Presume you did a bunch of your very own coding. http://machinalansu.pl/pro-flexen/

  13. specifically hour bimatoprost whenever pick naltrexone hcl near wonder careprost buy online ill president [url=https://bimatoprostonline.confrancisyalgomas.com/#]bimatoprost online[/url] finally
    desire bimatoprost ophthalmic solution exactly departure https://bimatoprostonline.confrancisyalgomas.com/

  14. I appreciate the content on your internet site. Cheers! http://zdravotnidesign.cz/nutrigo-lab-burner-recenze/

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *